Aasia Majeed – Sadiq Abad,Pakistan

Aasija Majeed

Short Bio! Ааsia Majeed

Aasia Majeed is from Pakistan and resides in Sadiq Abad city. At first she wrote child motivational stories and urdu articles in a very young age. Now, she writes poems also in both languages urdu and english. Through her writings, She always tries to reflect social issues specially related to women. She has contributed to various magazines and international anthologies. She also received a silver award from the international forum Motivational Strips.

Frigid human like frosty winter

On a wintry cold night

I came out of my house

To see and enjoy the

Beauties of winter.

Lonely, I walked and walked on the road.

Suddenly I heard some cries –

Cries of a woman coming from a house

A man mercilessly hitting his wife.

I was shaken,

But walked faster at that moment

After a few steps I saw a child in the middle of road

Shivering with cold, tired with hunger

Standing he was in front of a restaurant with shining eyes filled with hope

Men were eating and throwing meals to dogs

But no one took notice on boy’s desperation

My heart was filled with sorrow again

Faster I strode

At some distance I witnessed

A group of people dancing and enjoying

With loud music and songs

But with a single blow everything changed in a fleeting moment

Dead bodies drenched in blood everywhere

No one stopped

My heart wept the tears of blood

I walked faster again

But this time back towards home

That night I witnessed two faces of a single coin

Which really covered the human soul

On a wintry night

I saw the coldness of men

Am I a monster?

Haunted screams and cries

Broken dreams and desires

Deserted and rejected

I was brought to this world!

Was I really a slang,

Or an unwanted child?

My mother grinded her

Head in walls and tiles

Like my father raged to

Throw me in dirty water

Was I really a sin,

Or an immoral crime?

Being not a girl or boy

I was brought up with

Stones and annoyed

With shameless catcalls

Was I really made to be

Hanged or burnt alive?

Wiped out my own scars

Every night I sobbed aloud

On my trapped soul

That was caged inside

Was I really human,

Or a bloody monster?

I scratched the lines on

My hands with a sharp

Piece of glass pane to make

My own destiny!

Was I here for only

Dance and mockery?

With new spirit and devotion

Being insulted and agitated

I must spread that notion

We have hearts with emotions

Was I really so weak

Or fragile?

Papa kissed me first time

With guilt in those eyes

When I saved his life

By being a good doctor

I only ask one question

From all the cruel humans

What is our fault

For being a transgender?

Funeral ceremony of a Red Rose

O orchard, my family, fragrant and colorful

Lily, Pancy, Sunflower and Daisy

I am dying, heaving my last breaths

Come to attend the funeral ceremony of this indigent red rose of yours

Jasmine my sweetie! Why are you opening your petals mournfully?

Can’t you see me dying in distress

Oft I changed my colours, it didn’t violate the beauty of this lovely garden

Lemon balm soothes me when I am forlorn

For long I have become the victim at the hands of cruel humans

Like chameleons!

At times I lost my innocence : my colours changed

At first! When a father folded hands and begged for the marriage of his aged daughter

He sold his self and soul to maintain the false prestige with expensive dowry

How I cried on his grief when people crushed them both under their feet….

Then it was on the day a mother mourned the death of her young son the last hope in the twilight of her life

Silently I cried on the grave of this young man

Who turned from red to ash!

I wept too on the day a wicked lover spoiled the chastity of an angelic princess

With red ,pink roses,he compared her beauty

Ah! I sobbed on her suicidal day and turned my color redish to black.

And now I’m dying again today

When a poor boy who tried selling me in a bouquet

running pillar to post and returning with empty hands

With his family, I kept awake on an empty stomach

This dissolute beauty of mine didn’t change his fate of poverty

My tears drip at the sharp thorns of this cruel world!

Marigold come and burry me with your purple hands so deep down

I am a red rose anymore just a cactus..

Dreadful and pricky

I’m thin weak and withered

Alas no more dejection I can see

So come and attend the funeral ceremony of mine!

Lemon balm- symbol of sympathy

Marigold symbol of justice

„I am a woman“

I am a woman with flesh and blood

not made for your extreme lust

I have emotions, I have dreams

O would it be that you don’t forget

that I am also a human just as you

If only my purpose in life

if only my role in the society

had you realised!

Desires of thirsty eyes

Parched due to the tears of blood

O would it be that you don’t forget

Much do I suffer, I am a woman

a human, just as you

A graveyard this world would be

without me, do not crush me to death

Walking skeletons you would be

Quest for my soul, so pure

Why, o why you ignore!

Let us both live and love

try to win my heart, my core

that is my real grace

would it be that you are

Virtuous and sincere

since I am a woman

with flesh and blood

Ripped wings of hope

As the ancient Greek goddess

She is also an old soul in distress

Wanders in abysmal valleys and red deserts

Her wings ripped off by sharp scales of agony

She can’t fly: being injured now

Her longing to reach in the land of ataraxia

has increased manifold

With a wish to find solace in the arms of her lover

She pushes the backhanded clouds of the dark

The unlimited thrust of will forces her to climb that mountain of praxis

Ah! She is trapped now: there’s no runaround

In the blinding spell of gaints and witches

How glorious you are!

They worship her, a devi of the earthly creatures

She has made a conciliation and in

disinheritance from world’s agony,she felt comfort in afterworld alliance

She wrote verses of gloom and sang aloud the palinodes in her poems

Lying broken and clipped winged, in the memory of her lover.

Short story in Urdu language:

افسانہ:کھڑکی کے اس پار

از قلم: آسیہ مجید

شہر: صادق آباد

زندگی بھی کتنی عجیب چیز ہے ناں۔۔کبھی کبھی انسان کو ایسے دوراہے پر لا

کر کھڑا کر دیتی ہے کہ جہاں سے وہ نہ ایک قدم آگے جا سکتا ہے اور نہ ہی پیچھے۔

وہ بت بنی مسلسل وال کلاک کو ٹکٹکی باندھے دیکھے جارہی تھی ایسے جیسے وقت ٹھہر سا گیا ہو۔ان گنت سوال لاوا بن کر اسکے دماغ کی رگوں میں چکر کاٹ تھے۔مگر شاید اسکے پاس کسی سوال کا جواب نہ تھا۔۔۔آج پورا ہفتہ ہو گیا تھا اسے اس کمرے میں قید ہوۓ۔وہ دنیا اور اسکی ہر چیز سے بے نیاز فقط گنتی کہ دن پورے کر رہی تھی اس قیدی کی طرح جسکو نہ پھانسی نصیب ہوتی ہے اور نہ ہی خلاصی۔۔مگر ایسا کیسے ہو سکتا ہے ہم انسانوں کو سمجھنے میں ناکام کیسے ہو جاتے ہیں۔کیوں ہم ان کے رنگ بدلتے بہروپ کو پہچان نہیں پاتے۔کوئی اتنا خود غرض کیسے ہو سکتا ہے کہ دوسروں کے جائز ارمانوں کا عین اس وقت خون کر دے جب انکی پژمردہ سی آنکھوں میں رنگ بھرتے خواب روشن چراغ کی مانند جل اُٹھتے ہیں۔وہ اوندھی لیٹی تکیے میں منہ چھپاۓ مسلسل سسکیاں بھر رہی تھی۔

„اجالا بیٹا دروازہ کھولو۔۔“ٹھک ٹھک کی آواز سے وہ چونک گئ۔

„کھولو بیٹا …….دیکھو میں تمھارے لیے کھانا لائی ہوں۔“

ماں کے لہجے میں پیار اور فکر ملی جلی تھی ۔

„امی مجھے بھوک نہیں ہے۔“ پر اسنے سرد مہری سے پھر وہی جواب دہرایا جو وہ ایک ہفتے سے دے رہی تھی۔۔

„مگر بیٹا تُم ایک بار دروازہ تو کھولو ۔۔۔“مسز لیاقت کے بار بار اسرار پر بھی اندر وہی خاموشی برقرار تھی جیسے کسی نے سنا ہی نہ ہو۔گھر بھر صدمے سے دوچار تو تھا ہی مگر کسی سے بھی چہکتی ہوئی اجالا کی یہ حالت دیکھی نہیں جارہی تھی۔

„لا پتر! مجھے پلیٹ دے میں اپنی سوہنی شہزادی کو کھانا کھلاتی ہوں دیکھوں کیسی نہیں کھاتی۔“اجالا کی دادی نے مسز لیاقت سے پلیٹ لی اور لگیں دروازہ بجانے۔۔ٹھک ٹھک ٹھک۔۔

„پتر رے میری سوہنی شہزادی اجالا! دروازہ کھول کیا اپنی بوڑھی دادی کو بھی اندر نہیں آنے دے گی۔“

۔آخر اجالا اپنی پیاری دادی کی آواز سن کر بے چین ہوگئ اور دروازہ کھول دیا۔کمرے کی حالت بھی اجالا کی حالت سے ملی جلی تھی۔ہر طرف گرد جمی تھی جیسے یہاں کوئی رہتا ہی نہ ہو۔اجالا کی آنکھوں میں ڈھلتے سورج کی مانند لالی پھیلی ہوئی تھی۔

افف یہ دُکھ کم بخت چہروں سے نظر آ جاتے ہیں دادی اُسے دیکھ کر پریشان ہوئی۔وہ بھی دادی کو دیکھ کر فرطِ الفت سے لپٹ گئ۔

دادی جان پلنگ کے کونے کا سہارا لے کر پلنگ پر بیٹھیں اور اسکا سر اپنی گود میں رکھ کر پیار سے تھپتھپانے لگیں۔

„دادو آپ تو کہتی تھیں کہ اچھی بیٹییوں کے نصیب بھی اچھے ہوتے ہیں ۔ماں باپ کا سر فخر سے بلند کرنے والیوں کی گردنیں خداپاک ندامت و شرمندگی سے جھکنے نہیں دیتا۔۔“

„جی پتر ایسا ہی ہے رب سوہنے کے فیصلے حکمت سے خالی نہیں ہوتے وہ تو ہمارا سوہنا رب ہے نا جانتا ہے کہ ہمارے لیے کیا صحیح ہے اور کیا غلط

وقتی توڑ پھوڑ سے دل چھوٹا نہیں کرتے۔ارے پگلی وہ اپنے پیاروں کو ہی آزماتا ہے ناں تاکہ انکے سر فخر سے بلند کر سکے نہ صرف اس دنیا میں بلکہ اس وقت بھی جب سب اسکی بارگاہ میں پیش ہوں گے۔“ دادی نے پیار سے سمجھایا کتنا سکون تھا اُنکے لہجے میں۔

„چل میرا پتر! دل چھوٹا نہ کر وہ اظہر کلموہا تو میری ہیرے جیسی بیٹی کے قابل ہی نہیں تھا۔ دیکھ کچھ کھا لے ۔“دادی نے نوالہ بنا کر اسکے منہ میں ڈالنا چاہا

„۔نہیں میں نے نہیں کھانا۔“اس نے دادی کے ہاتھ کو پیچھے کی طرف دھکیلا۔ „میرا بیٹا تیری دادی کے بازوؤں میں اب اتنا دم نہیں کہ تیرا مقابلہ کر سکیں۔ دیکھ اتنے دنوں سے ہم نے بھی کچھ نہیں کھایا۔تیری چہک نہیں ہے ناں تو گھر کی ویرانی ہمیں کاٹ کھانے کو ڈور رہی ہے۔بیٹا یہ دنیا ہے یہاں ہر موڑ پر کئ کہانیاں بکھری ہوئی ہیں مگر جینا تو پڑتا ہےناں ۔کیونکہ جزا سزا کا تو ایک ہی دن مقرر ہے۔بس پتر! کبھی بھی ٹھنڈی ہوا کو پانے کی خاطر اپنےدل کی کھڑکیوں کو بند نہ ہونے دینا۔۔۔“

„مگر …….مگر دادو!سب کیا کہیں گے میں کس کس کے سوالوں کا جواب دوں گی“

۔ارے بھاڑ میں جایئں لوگ۔۔بیٹا جی ! کچھ بھی تو نہیں بدلتا زندگی تو اسی ڈگر پر چل رہی ہوتی ہے۔بس ہم ہی آنکھیں موند لیتے ہیں۔۔۔

چل شاباش ! جلدی سے تیار ہو جا آج ہم سب ملکر سمندر کی سیر کو چلتے ہیں تجھے بہت پسند ہے ناں۔۔ „

„لیکن دادی جان!“

„ارے کوئی لیکن ویکن نہیں۔چل چل شاباش اُٹھ! حامد بیٹا لیاقت سے کہو گاڑی نکالے-„دادی نے اجالا کے چھوٹے بھائی کو آواز دی۔

اتنے دنوں بعد وہ باہر نکلی تھی ۔ساحل سمندر کی رونقیں بھی اسے اپنی طرف مائل نہیں کر رہی تھی۔۔وہ اپنے اردگرد کے منظر سے لاپرواہ اپنی دھن میں چلی جارہی تھی جیسے پانی کی گہرائیوں کا اندازہ لگا رہی ہوں۔آخر چلتے چلتے وہ تھک ہار کر بیٹھ گئ۔بیتے لمحوں کی اذیت ناک یادیں اسکی آنکھوں کے سامنے رقص کرنے لگیں۔۔

کتنے خوش تھے ناں سب جب لیاقت صاحب کے بچپن کے دوست اصغر علی نے اپنے بیٹے اظہر علی کے لیے اجالا کا ہاتھ مانگا تھا۔ابھی تو اسکا بی-اےکا رزلٹ بھی نہیں آیا تھا۔۔کالج سے واپسی پر جب امی نے اسے بتایا تو اس نے بیزاری کا اظہار کیا تھا ایک تو وہ اظہر کو جانتی نہیں تھی دوسرا وہ ابھی شادی نہیں بلکہ آگے پڑھنا چاہتی تھی ۔اُف پھر کیا امی اور دادی سے اسے کتنے لیکچر سننے پڑے تھے اچھی بیٹیاں یہ نہیں کرتیں وہ نہیں کرتیں اور تو اور لیاقت صاحب نے تو اصغر صاحب سے فرمائش بھی کر ڈالی تھی کہ انکی بیٹی آگے پڑھنا چاہتی ہےاس لیے شادی کے بعد اپنی تعلیم جاری رکھے گی۔ بھلا انھیں کیا اعتراض ہوسکتا تھا اسنے کونسا جوائنٹ فیملی کے جھنجھٹ میں پڑنا تھااس نے تو اپنے میاں جی کے ساتھ لاہور شفٹ ہونا تھا کیونکہ اظہر کی جاب وہاں تھی تو پھر کیا چاہے جو مرضی کرے۔ سب کچھ کتنااچانک ہوگیا تھا اچھا رشتہ اور پھر جھٹ منگنی ۔سب کتنےخوش تھے اوراُٹھتے بیٹھتے رب کا شکر اداکرتےتھے۔

ہوا کی تیزی سے اسکے چہرے پر بال بکھر رہے تھے ہر طرف سب انجواۓ کر رہے تھے مگر اسکو بھلا کیا غرض کسی سے۔وہ تو بس گھٹنوں میں منہ چھپاۓ ساکن بیٹھی تھی۔لیاقت صاحب سے اپنی پھول جیسی بیٹی کا دکھ دیکھا نہیں جارہا تھا وہ آگے بڑھنے لگے تاکہ اسکا کچھ دل بہلائیں مگر دادی جان نے انھیں روک دیا „نہ بیٹا زخم ابھی تازہ ہےاسے کچھ موقع دو میری بیٹی بہت مضبوط ہے سنبھل جاۓ گی کچھ وقت اسے اکیلے رہنے دو، بہہ جانے دو دل کے غبار کو جب گرد اچھےسے دھل جاۓ گی نا تو سب بہت اجلا ہو جاۓ گا جیسے بارش کے بعد بنجر زمین کو حیات مل جاتی ہے۔“

„قصور میرا ہے مجھے جذباتی ہوکر ہاں کرنی ہی نہیں چاہیے تھی اور اگر منگنی کر بھی دی تھی تو اس غبیث سے بات کرنےکی اجازت مجھے دینی ہی نہیں چاہیے تھی۔“لیاقت صاحب بےبسی سے کہتے جا رہے تھے۔

„آپ بھی کیا کرتے انکے گھر والوں کا اثرار ہی اتنا تھا کہ نئے دور کے بچے ہیں ایک دوسرے کو سمجھ جایئں گے۔“مسز لیاقت نے اپنے شوہر کو تسلی دینی چاہی۔

„بس بیٹا ہونی کو کون ٹال سکتا ہے ہم کسی کے دل میں تھوڑی جھانک سکتے ہیں۔“سب مختلف طریقوں سے ایکدوسرے کو ڈھارس بندھا رہے تھے۔

جیسے جیسے یادوں کی کڑواهٹ بڑھتی جا رہی تھی۔اجالا کے آنسووؤں کی روانی بھی تیز ہوتی جارہی تھی ۔۔کہنے کو تو صرف چھ ماہ کا یہ تعلق تھا مگر اسکے ساتھ جذباتی وابستگی ہوگئ تھی اور کیوں نہ ہوتی اسکی باتوں میں جادو ہی ایسا تھا کہ کوئی بھی اسکے سحر میں مبتلا ہو جاۓ حالانکہ وہ تو بہت reserve رہنے کی کوشش کرتی کبھی کھل کر اپنی فیلنگ کا اظہار تک نہیں کیا تھا۔

„کوئی اتنا بے حس کیسے ہو سکتا ہے اسے ایک پل کے لیے بھی میرا خیال نہیں آیا اور اگر پرواہ نہیں تھی تو مجھ سے منگنی کیوں کی تھی کیوں مجھےیہ احساس دلایا تھا کہ وہ بہت خوش ہے میرا ساتھ پا کر اور اور اب تو صرف ایک ماہ رہ گیا تھا شادی میں تو وہ اب اتنی ڈھٹا ئی سے کیسے کہہ سکتا تھا „

(اجالا مجھے تمھاری مدد چاہیے مجھے پتہ ہے تم اچھی لڑکی ہو مگر میں کسی اور کو پسند کرتا ہوں۔معلوم تھا مجھےکہ پاپا نہیں مانیں گے اس لیے میں نے تم سے منگنی کرلی اور بات کرنے کے لیے انکو راضی کرتا رہا۔دراصل تم ہی ہو جو میری مدد کر سکتی ہو پلیز تم کچھ بھی کہہ کہ اس منگنی سے انکار کر دو اسطرح مجھے پاپا کے سامنے شرمندہ نہیں ہونا پڑے گا۔“اجالا کے تو جیسے اوسان ہی خطاء ہوگۓ جب یہ سب اس نے آخری مرتبہ فون پر کہا تھا۔

“ تم ہوش میں تو ہو مسڑ کیا کہہ رہے ہو …..؟“

„واہ کیا خوب پلاننگ کی ہے۔ ذرا بھی شرم نہیںآئی ۔مجھ سے یہ بات کرتے ہوۓ۔“

„دیکھو پلیز میری مجبوری سمجھو“

„۔مجھے کچھ نہیں سننا ۔آپ کا جو جی چاہے وہی کریں۔۔“)

کتنا ٹوٹ سی گئ تھی وہ قسمت کے اس بھونڈے مذاق سے۔ابھی تو اسکے خوابوں کی اڑان نے پرواز بھرنا شروع کی تھی کہ اسے اوندھے منہ کے بل گرنا پڑا۔۔

وہ اپنے اردگرد کے منظر سے بالکل ناآشنا کھلے آسمان کے نیچے ساحل سمندر پر بیٹھی اپنے ہاتھوں کی شکست خوردہ لکیروں کو حیرت سے تک رہی تھی۔بے بسی کے آنسو اور چہرے پہ گرتے تند و تیز موجوں کے ذرے اسکے ریزہ ریزہ ہو تے وجود کو سنبھالنے کی کوشش کر رہے تھے تاکہ نوحہ کرتی اندر کی آوازوں کا شور کہیں باہر نہ سنائی دینے لگے ۔

وہ تکلیف دہ منظر اسکی آنکھوں کے سامنے آیا۔جب اصغر صاحب نے شرمندگی سے معافی مانگتے ہوۓ اسکے بابا کو اپنے نالائق بیٹے کا فیصلہ سنایا تو اسکے ضبط کے سارے بندھن ٹوٹ گئے اور وہ پھوٹ پھوٹ کر رونے لگی۔ جب غبار اچھے سے جھٹ گیا تو اسنے سمندر کے ٹھنڈے پانی سے منہ دھویا اور تیز تیز قدم بھرتی اپنی فیملی کی طرف آئی

“ پاپا گھر چلیں مجھے گھر جانا ہے۔۔“

آج بستر پر دراز ہوتے ہی وہ گہری نیند سوگئ ۔کتنے دنوں بعد وہ چین سے سوئی تھی۔کیونکہ اس نے فیصلہ کر لیا تھا کہ اب وہ مزید کسی کی بے بیوفائی کا ماتم نہیں مناۓ گی۔ضروری نہیں کہ زندگی کے سب سوالوں کا جواب ہمیں فوراً مل جاۓ۔کچھ پہلییوں کو سلجهنے میں عمریں بیت جاتیں ہیں۔

صبح گلی میں کرکٹ کھیلتےمحلے کے بچوں کی آواز سےوہ جاگ گئ۔ وہ تیزی سےاٹھی اور کھڑکی کھول کر باہر کے منظر سے لطف اندوز ہونے لگی جو وہ اکثر کیا کرتی تھی۔۔سب کچھ ویسے کا ویسے ہی تھا وہی بچوں کی لڑائی،نان چنے کی ریڑھی پر رش جوں کا توں تھا۔بدلہ تو کچھ بھی نہیں تھا۔سچ کہتی ہیں دادی کبھی ہم اپنے مجرم خود ہی ہوتے ہیں زندگی باہیں پھیلاۓ ہمارا اتنظار کر رہی ہوتی ہے اورہم ایک محرومی کا ازالہ آنے والی خوشیوں کے راستےمیں باڑ لگا کرتے ہیں۔ ۔۔وہ ہلکی سی مسکراہٹ کے ساتھ کھڑکی کے اس پار کی رونق دیکھ رہی تھی کہ اسکے ابو چاۓ ہاتھ میں لیے کمرے میں داخل ہوۓ۔

„ارےابو جی ! مجھے بلا لیا ہوتاآپ نے کیوں زحمت کی-“ „بیٹا جی! دیکھو تو سہی میں تمھارے لیے کیا لایا ہوں۔ تمھارا ایم اے کا ایڈ میشن فارم میری بیٹی آگے پڑھنا چاہتی تھی ناں۔“

„او واوؤ بابا یو آر گریٹ۔“وہ خوشی سی اچھلی۔لیاقت صاحب کی آنکھوں میں ندامت کے آنسو تھے۔

„بیٹا جی مجھے معاف کردو۔۔میں ہی تمھارا مجرم ہوں پتہ نہیں کیوں مجھ جیسے ماں باپکو لگتا ہے کہ وہ ہمیشہ ٹھیک ہیں اور جانے انجانے میں۔۔“

“ بس بابا! „اجالا نے اگلی بات سنے بغیرجلدی سے انکے منہ پر ہاتھ رکھ دیا۔اور پرنم آنکھوں سے انکے لرزتے ہاتھوں کو بوسہ دے کر سارے گلے شکوے دور کر دیے-

©Aasia Majeed

Pakistan 🇵🇰

Leave a Reply

Ваша адреса е-поште неће бити објављена. Неопходна поља су означена *